یاد ہیں نا یہ الفاظ؟
جھوٹ بولنے سے مال بک جاتا ہے لیکن برکت ختم ہو جاتی ہے۔
ہر وہ پوسٹ جو ایڈورٹائزنگ یا مارکیٹنگ کے نام پر جھوٹ کو فروغ دے۔ معصوم لوگوں کو دھوکہ دے۔ لوگوں کو گالم گلوچ پر اُکسائے۔ اشتعال پیدا کرے۔ اُس کی لائیکس تو بڑھ سکتی ہیں۔ اُسے متعدد مرتبہ شیئر بھی کیا جا سکتا ہے لیکن اُس بے برکتی میں اضافہ یقینی ہے جو آج ہمیں ہر جگہ دکھائی دیتی ہے۔
نحوست اور بے برکتی نے ہمیں چاروں اطراف سے گھیر رکھا ہے۔ ہر شخص بے سکونی کا رونا روتا ہے۔
او بابا! بے سکونی ہماری اپنی پیدا کردہ ہے۔
ہم دھوکہ دینے سے باز نہیں آتے۔ جھوٹ بول کر منافع کمانا چاہتے ہیں۔ تحقیق کرنا ہمیں اچھا نہیں لگتا۔ ہم عرب کے جہلاء کی طرح آنکھیں، کان اور دل بند کئے پوسٹیں کرتے رہتے ہیں اور بغیر عمل کئے شیئر کرتے رہتے ہیں۔
جہالت کی انتہا ہے ۔۔۔۔ اور بت پرستی کسے کہتے ہیں؟
یہ دیکھیں! شیر اللہ اللہ کر رہا ہے۔ یہ دیکھیں بکرے پر اللہ لکھا ہے۔ سبحان اللہ! چاند میں خانہ کعبہ نظر آرہا ہے۔ یہ درخت دیکھیں سجدہ کر رہا ہے۔ یہ آنکھ دیکھیں اس میں علی کا نام نظر آ رہا ہے۔ یہ سیب دیکھیں اس میں اللہ کا نام ہے۔ او رب کریم کا خوف کرو۔
کائنات کی ہر شے اُس کی تسبیح کرتی ہے۔ ہر شے اُسی کی پیدا کردہ ہے۔
فوٹوشاپڈ کبریائی کا محتاج نہیں الوہی نظام۔
دین اسلام کو ایسی شہادتوں کی ہرگز ضرورت نہیں۔ دین اسلام کی قوت کا مظاہرہ کرنا ہے تو مسلمانوں کے عمل اور کردار کی پوسٹیں کرو۔ دکھائو دنیا کو کہ جب کوئی مسلمان ہوتا ہے تو کیسے اُس کے کردار میں انقلابی تبدیلیاں پیدا ہوتی ہیں۔
بت مت بنائو۔ ہماری ایسی حرکتوں نے اب تک جانے کتنے دو نمبر پیروں فقیروں کو ارب پتی بنا دیا ہے۔
جھوٹے، دغاباز اور جعلی لوگوں کی مارکیٹنگ مت کرو۔ اسلام سراسر محنت ہے۔ اسلام سراسر دلیل ہے۔ اسلام سراسر منطق ہے۔۔
اپنے اپنے پیجز کی لائیکس بڑھاتے بڑھاتے کہیں ملائکہ اور قدسیوں کی نظر میں ان لائیک نہ ہو جانا۔
یہ بدبختی ہے۔ اس سے بچو۔
کرتوت ٹھیک کرو۔ پوسٹوں کو مسلمان کرنے سے زیادہ اپنا کردار مسلمان کرلو تو فلاح ہے۔ ماں کے احترام کی پوسٹیں کرتے ہو، ماں کے پاس جا کر بیٹھو۔ حقیقت میں ماں کے پیر دبائو۔ اُس سے لاڈیاں کرو۔
باپ کی ناراضگی اللہ کی ناراضگی ہے۔ اپنے باپ سے پوچھو۔۔۔وہ راضی ہیں؟
درود شریف کی پوسٹیں کرنے والو! کتنا درود و سلام بھیجتے ہو دن میں؟ غریبوں کی بات کرنے والو! کتنے رشتے دار غریب ہیں جو تمہارے منتظر ہیں؟
علم بہت ہو چکا۔ عمل کی ضرورت ہے۔ حقیقی لائیکس کی ضرورت ہے۔ حقیقی محبتوں کو شیئر کرنے کی ضرورت ہے۔ جہاد کے نام سے ڈرنے والو!
جہاد کو سمجھو! جہاد عظیم جذبہ ہے۔ فساد سے نفرت کرتے کرتے کہیں فساد پھیلانے کا سبب تو نہیں بن رہے؟ سوچا کرو۔
اللہ کریم کو جواب دینا ہے۔ مجھے نہیں۔ اُسے نہیں۔ اللہ کریم کا سامنا کرنا ہے۔ وہاں ہر جھوٹ سامنے آئے گا۔
اللہ اکبر ۔